Pakistan Red Crescent facilitates repatriation of 25 Bangladeshi detainees

Home  /  Direct from the field  /  Current Page

The Pakistan Red Crescent Society (PRCS) and International Committee of Red Cross (ICRC) jointly facilitated the voluntary repatriation of 25 Bangladeshis detained in Karachi jails, who were sent back to their home country on Wednesday.

The detainees were charged under the Foreigners Act and had already completed their respective sentences. The PRCS, on the request of the Sindh Home Department via the Ministry of Foreign Affairs, Islamabad, arranged the voluntary repatriation of these Bangladeshis to their home country under its Restoring Family Links (RFL) program. The International Organization of Migration (IOM), on the request of PRCS, extended financial assistance by arranging air tickets and repatriation support, which includes $250 in cash each, non-food item kits, Covid-19 tests, and transportation and accommodation support in Bangladesh for the 16 detainees out of 25. Later, the Deputy High Commissioner of Bangladesh in Karachi arranged air tickets for the remaining nine detainees.

 

On Tuesday, December 22, the PRCS organized a farewell ceremony for the repatriation of Bangladeshi detainees at the District Jail, Malir. In his remarks on the occasion, PRCS Chairman Abrar ul Haq said the RFL is a key program under which the PRCS endeavors to restore contacts between family members on humanitarian grounds. He said the PRCS is in a unique position to undertake such initiatives due to its extensive reach as well as potential to assist people who are separated from their families, wherever they may be. He also mentioned his recent very successful visit of Saudi Arabia in this regard and said that soon a number of Pakistani detainees from Saudi Arabia will be back to their homeland and be able to reconnect with their families.

 

In her remarks, Shahnaz S. Hamid, Chairperson, PRCS Sindh Branch, commended the officials of the RFL Department of PRCS-Sindh for exploring and highlighting this important issue. She thanked the Deputy High Commissioner of Bangladesh in Karachi for assisting in arranging visas and providing air tickets for repatriation to the nine detainees. She also lauded the important role of PRCS National Headquarters Islamabad and the International Committee of Red Cross (ICRC) in responding promptly and expediting the matter with other humanitarian partners. Chairperson PRCS Sindh appreciated the activities of IOM and thanked them for providing financial assistance in arranging air tickets for the repatriation of Bangladeshi nationals.

 

She further remarked that ‘many of the individuals were returning to their families and communities after years of separation, which put some of them in the most vulnerable situation and without support. The PRCS coordinated with the International Committee of the Red Cross (ICRC) and the Bangladesh Red Crescent Society (BDRCS) to organize the transmission of family news to their relatives in Bangladesh and assist return to their hometown upon arrival’.

 

Shahnaz Hamid uttered that the PRCS gifted a travel kit to the 25 released persons as a token of friendship. In addition, 200 blankets have been handed over to Malir Jail for deserving prisoners. In her address, she added that during the first wave of COVID-19, the PRCS with the support of ICRC had distributed a large number of coronavirus prevention items including masks, sanitizers, hygiene kits, etc to more than 19,000 inmates at 29 jails in Sindh. She also said PRCS jointly with the ICRC is providing RFL services to foreign detainees in Sindh and Punjab under the directions of the Federal Review Board and in coordination with the Ministry of Foreign Affairs Islamabad and Home Department Sindh.

The Secretary Sindh branch Kanwar Waseem commended the efforts and sincere cooperation of the Sindh Home Department, Ministry of Foreign Affairs, the Bangladeshi High Commission in Karachi, and the IOM and remarked that through a well-coordinated response, these vulnerable Bangladeshi migrants were able to go back home and rejoin their families.

 

The ceremony was also attended by National RFL Program Manager Syed Muneeb Ilyas, Provincial RFL Program Manager Fawwad Khan Sherwani, SSP District Jail Malir Muhammad Aslam Malik and DSP District Jail Malir Syed Arshad Hussain.

 

 

پاکستان ریڈ کریسنٹ نے 25 بنگلہ دیشی قیدیوں کی وطن واپسی میں سہولت فراہم کی

پاکستان ریڈ کریسنٹ سوسائٹی (پی آر سی ایس) نے کراچی کی جیلوں میں زیر حراست 25 بنگلہ دیشیوں کی مدت سزا پوری ہونے پر وطن واپسی میں سہولت فراہم کی اور اس سلسلے میں منگل 22 دسمبر 2020 کو ڈسٹرکٹ جیل ملیرمیں ایک الوداعی تقریب کا اہتمام کیا۔ جس کے بعد رہا ہونے والے بنگلہ دیشیوں کو بدھ کے روز جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ کراچی سے ڈھاکہ روانہ کیا جائے گا۔ تمام 25 زیر حراست افراد پر غیر ملکی ایکٹ کے تحت فرد جرم عائد کی گئی تھی اور وہ  اپنی متعلقہ سزا کی مدت کو مکمل کر چکے تھے۔ پاکستان ریڈ کریسنٹ نے وزارت خارجہ اسلام آباد کو محکمہ داخلہ سندھ کی جانب سے موصول ہونے والی درخواست پر اپنے خاندانی روابط کی بحالی (آر ایف ایل) پروگرام کے تحت ان بنگلہ دیشیوں کی رضاکارانہ وطن واپسی کا بندوبست کیا۔ مہاجرین کے عالمی ادارے (آئی او ایم) نے پاکستان ریڈ کریسنٹ کی درخواست پر ، 25 میں سے 16 زیر حراست افراد کی ہوائی ٹکٹ اور وطن واپسی کے لیے مالی امداد کا انتظام کیا جس میں ہر ایک کو نقد رقم،دیگرضروری اشیاء کے ساتھ کوویڈ 19 ٹیسٹ اور بنگلہ دیش میں نقل و حمل اور رہائش کی امداد شامل ہے۔ بعدازاں ، کراچی میں بنگلہ دیش کے ڈپٹی ہائی کمشنر نے باقی 9 زیر حراست افراد کے لئے ہوائی ٹکٹ کا انتظام کیا۔  ڈسٹرکٹ جیل ملیرمیں منعقد تقریب میں اپنے تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے پاکستان ریڈ کریسنٹ کے چیئرمین جناب ابرار الحق صاحب نے کہا کہ خاندانی روابط کی بحالی ایک کلیدی پروگرام ہے جس کے تحت پاکستان ہلال احمر انسانی ہمدردی کی بنیاد پر بچھڑے ہوے خاندانوں کے افراد کے مابین رابطے بحال کرنے کی کوشش کرتا ہے۔ ابرار الحق نے کہا کہ پاکستان ریڈ کریسنٹ ہزاروں پاکستانیوں کو وطن واپس لانے کے لئے بھی کام کر رہا ہے جو پہلے ہی غیر ملکی جیلوں میں اپنی سزاؤں کو مکمل کر چکے ہیں۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان ریڈ کریسنٹ سندھ برانچ کی چیئرپرسن  شہناز ایس حامد نے اس اہم معاملے سے متعلق تمام معلومات کا پتا لگانے اور درست طریقے سے اجاگر کرنے پر پاکستان ریڈ کریسنٹ سندھ کے محکمہ خاندانی روابط کی بحالی (آر ایف ایل) کے عہدیداروں کی تعریف کی۔ شہناز حامد نے کراچی میں بنگلہ دیش کے ڈپٹی ہائی کمشنر کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے تمام زیر حراست افراد کو ویزا کے انتظام اور وطن واپسی کے لئے نو زیر حراست افراد کے لیے ہوائی ٹکٹ فراہم کرنے میں معاونت کی۔ انہوں نے اس اہم معاملے پر فوری کاروائی کرنے اوردیگر تنظیموں کے ساتھ مل کے اس کو تیزی سے حل کرنے پر پاکستان ریڈ کریسنٹ کے نیشنل ہیڈ کوارٹراسلام آباد اور انٹرنیشنل کمیٹی آف ریڈ کراس (آ سی آر سی)  کے اہم کردار کو سراہا۔ چیئرپرسن نےمہاجرین کے عالمی ادارے (آئی او ایم)  کی سرگرمیوں کو سراہتے ہوے بنگلہ دیشی شہریوں کی وطن واپسی کے لئے ہوائی ٹکٹ کے انتظام میں مالی مدد فراہم کرنے پر ان کا شکریہ ادا کیا۔ شہناز حامد نے کہا کہ پاکستان ریڈ کریسنٹ نے رہائی پانے والے 25 افراد کو ایک ٹریول کٹ کا تحفہ بھی دیا ہے۔ اس کے علاوہ 200 کمبل مستحق قیدیوں کے لئے ملیر جیل کے حوالے کردیئے گئے ہیں۔ اپنے خطاب میں انہوں نے مزید کہا کہ کرونا وائرس کی پہلی لہر کے دوران پاکستان ریڈ کریسنٹ نے انٹرنیشنل کمیٹی آف ریڈ کراس (آ سی آر سی) کے تعاون سے بڑی تعداد میں کورونا وائرس سے بچاؤ کے لیے ماسک ، سینیٹائزرز ، حفظان صحت کٹس وغیرہ سندھ کی 29 جیلوں میں 19 ہزار سے زائد قیدیوں میں تقسیم کیں۔ اس تقریب میں پاکستان ریڈ کریسنٹ سندھ کے صوبائی سکریٹری جناب کنور وسیم ، ایس ایس پی ڈسٹرکٹ جیل ملیر جناب محمد اسلم ملک اور ڈی ایس پی ڈسٹرکٹ جیل ملیر جناب سید ارشد حسین نے بھی شرکت کی۔


Seven Fundamental Principles